What We Do

نشے سے انکار زندگی سے پیار

منشیات

نشہ نوجوان نسل کیلئے زہر

ہمارے آج کے معاشرے کا بہت بڑا مسئلہ منشیات ہیں جس کو ہم سب بھولے ہوئے ہیں منشیات کی لت ہمارے معاشرے کے لئے زندگی اور موت کا مسئلہ بن چکی ہے اور یہ عادت نوجوانوں کو دیمک کی طرح چاٹ رہی ہے جس کو کما حقہ سنجیدہ نہیں لیا جارہا سیاسی سطح پر کوئی سنجیدگی نظر آتی ہے اور نہ ہی عوامی شعور نے اسے کوئی خاص پذیرائی بخشی ہے یہ کسی ایک شخص کا معاملہ نہیں بلکہ یہ سنجیدہ عوامی اور قومی مسئلہ ہے جس کا براہ راست تعلق عوام الناس سے ہے جو اس سے فوری متاثر ہوتے ہیں پاکستان میں نشے کے عادی افراد کی بڑھتی ہوئی تعداد خاصی تشویشناک ہے جو تازہ ترین اعداد و شمار کے مطابق 6 فیصد سے کچھ زیادہ ہی ہے بے روزگار نوجوان اس قبیح عادت کا سب سے بڑا شکار ہیں یہ ایک نفسیاتی مسئلہ بھی ہے جس میں بے روزگاری بھی اہم رول ادا کر رہی ہے نشے کی عادت کے سبب انسانوں میں دیگر جسمانی عوارض بھی پیدا ہوجاتے ہیں جس سے خاندان کے خاندان تباہ ہو رہے ہیں کسی گھر میں اگر ایک شخص بھی نشے کا عادی ہے تو اس سے پورا خاندان کسی نہ کسی طور متاثر ہوتا ہے نشے سے متاثرہ لوگوں کو خاندان اور معاشرے کی توجہ اور رہنمائی کی شدید ضرورت ہے اس کے علاوہ آپ کے لئے اپنے بچوں کے معمولات پر نظر رکھنا انتہائی ضروری ہے بچوں اور ان کے دوستوں کے بارے میں غفلت سے بھی نقصانات کا اندیشہ ہے جس پر اگر بروقت توجہ نہ دی جائے تو انجام بھیانک ہو سکتا ہے اس کا تدارک ہم سب کی ذمہ داری ہے جس کو نہ صرف اجتماعی طور پر بلکہ انفرادی طور پر بھی ہر شخص اپنی ذمہ داری سمجھے ملک میں صرف اے این ایف ہی ایک ایسا ادارہ ہے جس نے اس ذمہ داری کو بطور جہاد لیا ہوا ہے اس ادارے کی موثر کارکردگی کے سبب بیرون ملک اسمگل کی جانے والی منشیات کے پکڑے جانے کی خبریں تواتر کے ساتھ میڈیا کی زینت بنتی رہتی ہیں عموما روزانہ ہی پاکستان کے مختلف ایئرپورٹس پر کسی نہ کسی منشیات کے سمگلر کو دھر لیا جاتا ہے موثر انٹیلی جنس کے سبب چلتے ٹرکوں گاڑیوں اوردیگر ذرائع نقل و حمل کو پکڑلیا جاتا ہے پاکستانی ادارے اپنی موثر کارکردگی کیلئے خراج تحسین کی مستحق ہے چند ماہ قبل پاکستان سے برطانیہ جانے والی قومی ایئرلائنز کی پرواز کو انگلینڈ میں کسی ایئرپورٹ پر اتار کر جہاز اور مسافروں کی کئی گھنٹے تک تلاشی لی گئی جو ہمارے قومی وقار کے منافی اور سبکی کا باعث تھا جس کی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ہے اس میں کوئی منظم گروہ ملوث ہے جس میں جہاز کے شعبہ انجینئرنگ کے لوگ بھی شامل ہیں جن کی ملی بھگت کے بغیر یہ ایسا کرنا نا ممکن ہے آمدہ اطلاعات کے مطابق منشیات کے خلاف کام کرنے والے ادارے نے اس معاملے میں ملوث تقریبا تمام ہی ملزمان کو گرفتار کر لیا ہے جس میں بااثر افراد بھی شامل ہیں اس جرم میں ملوث تمام افراد کو مثالی سزائیں دی جانی چاہئیں جو باقیوں کے لئے باعث عبرت ہوں یہ نہایت منظم نیٹورک ہے جس کے تانے بانے پورے مغرب اور شمالی امریکہ تک پچھلے ہوئے ہیں اندرون ملک منشیات کے پھیلاو کی ایک سے زیادہ وجوہات ہیں مثلا ایکسائز کے ملازموں کی بڑی تعداد خود نشے کی لت میں مبتلا ہے خصوصا سندھ میں جہاں کہیں بھی ایکسائز کا ناکہ لگا ہو وہاں یہ سب کچھ ملاحظہ کیا جا سکتا ہے ضروری ہے کہ ان کی بھرتیاں میرٹ پر ہوں اور بھرتی کے بعد ان کی مناسب تربیت انتہائی ضروری ہے اور اس کے بعد ان کی کارکردگی پر بھی نظر رکھنے کی ضرورت ہوگی اسی طرح مقامی پولیس کی سرپرستی بھی منشیات کے پھیلا کا بہت بڑا سبب ہے پولیس اسٹیشنوں کی غالب اکثریت منشیات فروشوں کی سرپرستی کرتی ہے یہ کوئی راز نہیں آج کل تو سوشل میڈیا پراس قسم کی شکایات معمول کی بات ہے اس کے تدارک کیلئے منظم اور مربوط کوششیں ضروری ہیں پولیس کی تربیت اور اسکروٹنی کا سخت نظام نافذ کر کے مثبت نتائج حاصل کئے حا سکتے ہیں عوام الناس کی آگاہی کے سلسلے میں علما کا رول نہایت اہم ہو سکتا ہے خطیب حضرات اس اہم مسئلے کو خطبہ جمعہ کا موضوع بنائیں سرکاری عمال اسکولوں کالجوں میں جاکر طلبا اور اساتذہ کو اس مسئلے کی اہمیت سے آگاہ کریں نشے کے معاشرے پر منفی اثرات کے بارے انہیں آگاہی دی جائے اور اس سے اجتناب کی ترغیب دی جائے اور جامعات اور دیگر اداروں کے نفسیاتی ماہرین اور اے این ایف کی جانب سے اس کے تدارک کے لئے تجاویز مرتب کرکے آگاہی مہم چلائی جائے لوگوں کو منشیات کے استعمال کے نتیجے میں متاثر ہونے والے افراد میں پیدا ہونے والی نفسیاتی اورجسمانی پیچیدگیوں کے متعلق آگاہی دی جائے اسکولوں کالجوں اور جامعات میں اس موضوع پر لیکچر دئے جائیں جونیئر کلاسوں ہی سے طالب علموں کو منشیات کے استعمال سے ہونے والے نقصانات اور پیچیدگیوں کے بارے میں بتایا جائے عام آدمی کو اس طرف توجہ دلائی جائے اے این ایف مبارکباد کی مستحق ہے جس نے اس اہم قومی مسئلہ کی اہمیت کا اداراک کرتے ہوئے عوامی شعور بیدار کی خاطر ملکی ذرائع ابلاغ کو اس مہم میں ہاتھ بٹانے کیلئے درخواست کی ہے جو نہایت خوش آئند امر ہے ہم اس مسئلے پر گاہے بگاہے لکھتے رہتے ہیں اور آئندہ بھی اس کار خیر اور نہایت اہم قومی مسئلے پر عوام کو آگاہ کرنے کی کوشش کرتے رہیں گے اللہ ہمیں قومی مسائل پر سنجیدگی کی توفیق عطا فرما

اے اللہ وطن اور اہل وطن کی حفاظت فرمائے ۔آمین

 

Print   Email